Friday, September 28, 2012

Class XI, PHYSICS, "Work, Power and Energy"

Work, Power and Energy

Work is said to be done when a force causes a displacement to a body on which it acts.
Work is a scalar quantity. It is the dot product of applied force F and displacement d.
Diagram Coming Soon
W = F . d
W = F d cos θ ………………………… (1)
Where θ is the angle between F and d.
Equation (1) can be written as
W = (F cos θ) d
i.e., work done is the product of the component of force (F cos θ) in the direction of displacement and the magnitude of displacement d.
equation (1) can also be written as
W = F (d cos θ)
i.e., work done is the product of magnitude of force F and the component of the displacement (d cos θ) in the direction of force.
Unit of Work
M.K.S system → Joule, BTU, eV
C.G.S system → Erg
F.P.S system → Foot Pound
1 BTU = 1055 joule
1 eV = 1.60 x 10(-19)
Important Cases
Work can be positive or negative depending upon the angle θ between F and d.
Case I
When θ = 0º i.e., when F and d have same direction.
W = F . d
W = F d cos 0º ………….. {since θ = 0º}
W = F d …………………….. {since cos 0º = 1}
Work is positive in this case.
Case II
When θ = 180º i.e., when F and d have opposite direction.
W = F . d
W = F d cos 180º ………………………. {since θ = 180º}
W = – F d ………………………………….. {since cos 180º = -1}
Work is negative in this case
Case III
When θ = 90º i.e, when F and d are mutually perpendicular.
W = F . d
W = F d cos 90º ………………………. {since θ = 90º}
W = 0 ……………………………………. {since cos 90º = 0}
Work Done Against Gravitational Force
Consider a body of mass ‘m’ placed initially at a height h(i), from the surface of the earth. We displaces it to a height h(f) from the surface of the earth. Here work is done on the body of mass ‘m’ by displacing it to a height ‘h’ against the gravitational force.
W = F . d = F d cos θ
F = W = m g
d = h(r) – h(i) = h
θ = 180º
{since mg and h are in opposite direction}
W = m g h cos 180º
W = m g h (-1)
W = – m g h
Since this work is done against gravitational force, therefore, it is stored in the body as its potential energy (F.E)
P . E = m g h
Power is defined as the rate of doing work.
If work ΔW is done in time Δt by a body, then its average power is given by P(av) = ΔW / Δt
Power of an agency at a certain instant is called instantaneous power.
Relation Between Power and Velocity
Suppose a constant force F moves a body through a displacement Δd in time Δt, then
P = ΔW / Δt
P = F . Δd / Δt ………………… {since ΔW = F.Δd}
P = F . Δd / Δt
P = F . V …………………………… {since Δd / Δt = V}
Thus power is the dot product of force and velocity.
Units of Power
The unit of power in S.I system is watt.
P = ΔW / Δt = joule / sec = watt
1 watt is defined as the power of an agency which does work at the rate of 1 joule per second.
Bigger Units → Mwatt = 10(6) watt
Gwatt = 10(9) watt
Kilowatt = 10(3) watt
In B.E.S system, the unit of power is horse-power (hp).
1 hp = 550 ft-lb/sec = 746 watt
The ability of a body to perform work is called its energy. The unit of energy in S.I system is joule.
Kinetic Energy
The energy possessed by a body by virtue of its motion is called it kinetic energy.
K.E = 1/2 mv2
m = mass,
v = velocity
Prove K.E = 1/2 mv2
Kinetic energy of a moving body is measured by the amount of work that a moving body can do against an unbalanced force before coming to rest.
Consider a body of mas ‘m’ thrown upward in the gravitational field with velocity v. It comes to rest after attaining height ‘h’. We are interested in finding ‘h’.
Therefore, we use
2 a S = vf2 – vi2 ………………………. (1)
Here a = -g
S = h = ?
vi = v (magnitude of v)
vf = 0
(1) => 2(-g) = (0)2 – (v)2
-2 g h = -v2
2 g h = v2
h = v2/2g
Therefore, Work done by the body due to its motion = F . d
= F d cos θ
F = m g
d = h = v2 / 2g
θ = 0º
Therefore, Work done by the body due to its motion = (mg) (v2/2g) cos0º
= mg x v2 / 2g
= 1/2 m v2
And we know that this work done by the body due to its motion.
K.E = 1/2 m v2
Potential Energy
When a body is moved against a field of force, the energy stored in it is called its potential energy.
If a body of mass ‘m’ is lifted to a height ‘h’ by applying a force equal to its weight then its potential energy is given by
P.E = m g h
Potential energy is possessed by
1. A spring when it is compressed
2. A charge when it is moved against electrostatic force.
Prove P.E = m g h OR Ug = m g h
Consider a ball of mass ‘m’ taken very slowly to the height ‘h’. Therefore, work done by external force is
Wex = Fex . S = Fex S cos θ ……………………………. (1)
Since ball is lifted very slowly, therefore, external force in this case must be equal to the weight of the body i.e., mg.
Fex = m g
S = h
θ = 0º ……………………. {since Fex and h have same direction}
(1) => Wex = m g h cos 0º
Wex = m g h …………………………………………………………. (2)
Work done by the gravitational force is
Wg = Fg . S = Fg S cosθ …………………………………………. (3)
Fg = m g
S = h
θ = 180º …………………. {since Fg and h have opposite direction}
(3) => Wg = m g h cos 180º
Wg = m g h (-1)
Wg = – m g h …………………………………………………………. (4)
Comparing (2) and (4), we get
Wg = -Wex
Wex = – Wg
The work done on a body by an external force against the gravitational force is stored in it as its gravitational potential energy (Ug).
Ug = Wex
Ug = – Wg ………………………… {since Wex = -Wg}
Ug = -(-m g h) ………………… {since Wg = – m g h}
Ug = m g h ……………………………………….. Proved
Absolute Potential Energy
In gravitational field, absolute potential energy of a body at a point is defined as the amount of work done in moving it from that point to a point where the gravitational field is zero.
Determination of Absolute Potential Energy
Consider a body of mass ‘m’ which is lifted from point 1 to point N in the gravitational field. The distance between 1 and N is so large that the value of g is not constant between the two points. Hence to calculate the work done against the force of gravity, the simple formula W = F .d cannot be applied.
Therefore, in order to calculate work done from 1 to N, we divide the entire displacement into a large number of small displacement intervals of equal length Δr. The interval Δr is taken so small that the value of g remains constant during this interval.
Diagram Coming Soon
Now we calculate the work done in moving the body from point 1 to point 2. For this work the value of constant force F may be taken as the average of the forces acting at the ends of interval Δr. At point 1 force is F1 and at point 2, force is F2.
Law of Conservation of Energy
Energy can neither be created nor be destroyed, however, it can be transformed from one form to another.
According to this law energy may change its form within the system but we cannot get one form of energy without spending some other form of energy. A loss in one form of energy is accompanied by an increase in other forms of energy. The total energy remains constant.
For the verification of this law in case of mechanical energy (Kinetic and potential energy). Let us consider a body of mass ‘m’ placed at a point P which is at a height ‘h’ from the surface of the earth. We find total energy at point P, point O and point Q. Point Q is at a distance of (h-x) from the surface of earth.

Class XI, PHYSICS, "Gravitation"


The property of all objects in the universe which carry mass, by virtue of which they attract one another, is called Gravitation.
Centripetal Acceleration of the Moon
Newton, after determining the centripetal acceleration of the moon, formulated the law of universal gravitation.
Suppose that the moon is orbiting around the earth in a circular orbit.
If V = velocity of the moon in its orbit,
Rm = distance between the centres of earth and moon,
T = time taken by the moon to complete one revolution around the earth.
For determining the centripetal acceleration of the moon,. Newton applied Huygen’s formula which is
a(c) = v2 / r
For moon, am = v2 / Rm ………………… (1)
But v = s/t = circumference / time period = 2πRm/T
v2 = 4π2Rm2 / T2
=> a(m) = (4π2Rm2/T2) x (1/Rm)
a(m) = 4π2Rm / T2
Put Rm = 3.84 x 10(8) m
T = 2.36 x 10(6) sec
a(m) = 2.72 x 10(-3) m/s2
Comparison Between ‘am’ AND ‘g’
Newton compared the centripetal acceleration of the moon ‘am’ with the gravitational acceleration ‘g’.
i.e., am / g = 1 / (60)2 …………….. (1)
If Re = radius of the earth, he found that
Re2 / Rm2 – 1 / (60)2 ……………………. (2)
Comparing (1) and (2),
am / g = Re2 / Rm2 ………………………………. (3)
From equation (3), Newton concluded that at any point gravitational acceleration is inversely to the square of the distance of that point from the centre of the earth. It is true of all bodies in the universe. This conclusion provided the basis for the Newton’ Law of Universal Gravitation.
Newton’s Law of Universal Gravitation
Consider tow bodies A and B having masses mA and mB respectively.
Diagram Coming Soon
F(AB) = Force on A by B
F(BA) = Force on B by A
r(AB) = displacement from A to B
r(BA) = displacement from B to A
r(AB) = unit vector in the direction of r(AB).
r(BA) = unit vector in the direction of r(BA).
From a(m) / g = Re2 / Rm2, we have
F(AB) ∞ 1 / r(BA)2 ……………………. (1)
F(AB) ∞ m(A) …………………………. (2)
F(BA) ∞ m(B)
According to the Newton’s third law of motion
F(AB) = F(BA) ……………….. (for magnitudes)
F(AB) ∞ m(B) ………………………….. (3)
Combining (1), (2) and (3), we get
F(AB) ∞ m(A)m(B) / r(BA)2
F(AB) = G m(A)m(B) / r(BA)2 ……………………… (G = 6.67 x 10(-11) N – m2 / kg2)
Vector Form
F(AB) = – (G m(A)m(B) / r(BA)2) r(BA)
F(BA) = – (G m(B)m(A) / r(AB)22) r(AB)
Negative sign indicates that gravitational force is attractive.
Statement of the Law
“Every body in the universe attracts every other body with a force which is directly proportional to the products of their masses and inversely proportional to the square of the distance between their centres.”
Mass and Average Density of Earth
M = Mass of an object placed near the surface of earth
M(e) = Mass of earth
R(e) = Radius of earth
G = Acceleration due to gravity
According to the Newton’s Law of Universal Gravitation.
F = G M Me / Re2 ……………………….. (1)
But the force with which earth attracts a body towards its centre is called weight of that body.
Diagram Coming Soon
F = W = Mg
(1) => M g = G M Me / Re2
g = G Me / Re2
Me = g Re2 / G ……………………………. (2)
g = 9.8 m/sec2,
Re = 6.38 x 10(6) m,
G = 6.67 x 10(-11) N-m2/kg2, in equation (2)
(1) => Me = 5.98 x 10(24) kg. ………………. (In S.I system)
Me = 5.98 x 10(27) gm ……………………………… (In C.G.S system)
Me = 6.6 x 10(21) tons
For determining the average density of earth (ρ),
Let Ve be the volume of the earth.
We know that
Density = mass / volume
ρ = Me / Ve ……………………… [Ve = volume of earth]
ρ = Me / (4/3 Π Re3) ………….. [since Ve = 4/3 Π Re3]
ρ = 3 Me / 4 Π Re3
Me = 5.98 x 10(24) kg
& Re = 6.38 x 10(6) m
ρ = 5.52 x 10(3) kg / m3
Mass of Sun
Let earth is orbiting round the sun in a circular orbit with velocity V.
Me = Mass of earth
Ms = Mass of the sun
R = Distance between the centres of the sun and the earth
T = Period of revolution of earth around sun
G = Gravitational constant
According to the Law of Universal Gravitation
F = G Ms Me / R2 ……………………………… (1)
This force ‘F’ provides the earth the necessary centripetal force
F = Me V2 / R …………………………………….. (2)
(1) & (2) => Me V2 / R = G Ms Me / R2
=> Ms = V2 R / G …………………………………. (3)
V = s / Π = 2Π R / T
=> V2 = 4Π2 R2 / T2
(3) => Ms = (4Π R2 / T2) x (R / G)
Ms = 4Π2 R3 / GT2 …………………………………. (4)
Substituting the value of
R = 1.49 x 10(11),
G = 6.67 x 10(-11) N-m2 / kg2,
T = 365.3 x 24 x 60 x 60 seconds, in equation (4)
We get
Ms = 1.99 x 10(30) kg
Variation of ‘g’ with Altitude
Suppose earth is perfectly spherical in shape with uniform density ρ. We know that at the surface of earth
g = G Me / Re2
G = Gravitational constant
Me = Mass of earth
Re = Radius of earth
At a height ‘h’ above the surface of earth, gravitational acceleration is
g = G Me / (Re + h)2
Dividing (1) by (2)
g / g = [G Me / Re2] x [(Re + h)2 / G Me)
g / g = (Re + h)2 / Re2
g / g = [Re + h) / Re]2
g / g = [1 + h/Re]2
g / g = [1 + h/Re]-2
We expand R.H.S using Binomial Formula,
(1 + x)n = 1 + nx + n(n-1) x2 / 1.2 + n(n + 1)(n-2)x3 / 1.2.3 + …
If h / Re < 1, then we can neglect higher powers of h / Re.
g / g = 1 – 2 h / Re
g = g (1 – 2h / Re) …………………………… (3)
Equation (3) gives the value of acceleration due to gravity at a height ‘h’ above the surface of earth.
From (3), we can conclude that as the value of ‘h’ increases, the value of ‘g’ decreases.
Variation of ‘g’ with Depth
Suppose earth is perfectly spherical in shape with uniform density ρ.
Re = Radius of earth
Me = Mass of earth
d = Depth (between P and Q)
Me = Mass of earth at a depth ‘d’
At the surface of earth,
g = G Me / Re2 ……………………………….. (1)
At a depth ‘d’, acceleration due to gravity is
g = G Me / (Re – d)2 ……………………… (2)
Me = ρ x Ve = ρ x (4/3) π Re3 = 4/3 π Re3 ρ
Me = ρ x Ve = ρ x (4/3) π (Re – d)3 = 4/3 π (Re – d)3 ρ
Ve = Volume of earth
Substitute the value of Me in (1),
(1) => g = (G / Re2) x (4/3) π Re3 ρ
g = 4/3 π Re ρ G …………………………… (3)
Substitute the value of Me in (2)
g = [G / Re - d)2] x (4/3) π (Re – d)3 ρ
g = 4/3 π (Re – d) ρ G
Dividing (4) by (3)
g / g = [4/3 π (Re - d) ρ G] / [4/3 π Re ρ G]
g / g = (Re – d) / Re
g / g = 1 – d/Re
g / g = g (1 – d / Re) ……………………… (5)
Equation (5) gives the value of acceleration due to gravity at a depth ‘d’ below the surface of earth
From (5), we can conclude that as the value of ‘d’ increases, value of ‘g’ decreases.
At the centre of the earth.
d = Re => Re / d = 1
(5) => g = g (1-1)
g = 0
Thus at the centre of the earth, the value of gravitational acceleration is zero.
Weightlessness in Satellites
An apparent loss of weight experienced by a body in a spacecraft in orbit is called weightlessness.
To discuss weightlessness in artificial satellites, let us take the example of an elevator having a block of mass ;m; suspended by a spring balance attached to the coiling of the elevator. The tension in the thread indicates the weight of the block.
Consider following cases.
1. When Elevator is at Rest
T = m g
2. When Elevator is Ascending with an Acceleration ‘a’
In this case
T > m g
Therefore, Net force = T – mg
m a = T – m g
T = m g + m a
In this case of the block appears “heavier”.
3. When Elevator is Descending with an Acceleration ‘a’
In this case
m g > T
Net force = m g – T
m a = m g – T
T = m g – m a
In this case, the body appears lighter
4. When the Elevator is Falling Freely Under the Action of Gravity
If the cable supporting the elevator breaks, the elevator will fall down with an acceleration equal to ‘g’
From (3)
T = m g – m a
But a = g
T = m g – m g
T = 0
In this case, spring balance will read zero. This is the state of “weightlessness”.
In this case gravitation force still acts on the block due to the reason that elevator block, spring balance and string all have same acceleration when they fall freely, the weight of the block appears zero.
Artificial Gravity
In artificial satellites, artificial gravity can be created by spinning the space craft about its own axis.
Now we calculate frequency of revolution (v) of a space craft of length 2R to produce artificial gravity in it. Its time period be ‘T’ and velocity is V.
Diagram Coming Soon

Friday, September 14, 2012

Class XI, Islamiat, "خالی جگہ پر کریں"

خالی جگہ پر کریں

۱ جہاد کے لغوی معنی کوشش کے ہیں۔
۲ رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فریضہ حج دس ہجری میں ادا فرمایا۔
۳ سنن نسائی کے مصنف امام عبدالرحمان احمد بن علی انسانی ہیں۔
۵ حضرت ابوبکر رضہ نے قرآن مجید کی تدوین کا کام حضرت زید بن ثابت کے سپرد کیا۔
۶ جس نے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی اطاعت کی اس نے بلاشبہ اللہ تعالی کی اطاعت کی۔
۷ قرآن مجید کی سب سے طویل سورة البقرہ ہے۔
۸ آیت کے معنی عربی زبان میں نشانی کے ہیں۔
۹ زبور حضرت داود عہ پر نازل ہوئی۔
۰۱ آخری الہامی کتاب قرآن مجید ہے۔
۱۱ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے دادا کا نام عبدالمطلب ہے۔
۲۱ علم حاصل کرو چاہے تمہیں چین ہی کیوں نہ جانا پڑے۔
۳۱ پہلی وحی غارِ حرا میں ناذل ہوئی۔
۴۱ قرآن پاک میں کل۶۶۶۶ آیات ہیں۔
۵۱ کسی شخص نے حضور صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا کہ والدین کے اولاد پر کیا حقوق ہیں؟ آپ نے فرمایا ان کے لئے جنت اور دوزخ ہیں۔
۶۱ قرآن مجید میں ۴۱۱سورتیں ہیں۔
۷۱ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کا نام محمد صلی اللہ علیہ وسلم آپ کے دادا نے رکھا۔
۸۱ قرآن میں کل سات منزلیں ہیں۔
۹۱ قرآن کی سورة التوبہ کے شروع میں بسم اللہ نہیں پڑھی جاتی۔
۰۲ صلوة تراویح حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے تین دنوں تک پڑھائی۔
۱۲ حسد نیکیوں کو اسطرح کھاجاتا ہے جیسے آگ خشک لکڑی کو کھا جاتی ہے۔
۲۲ قرآن مجید میں۰۴۵ رکوع ہیں۔
۳۲ تلاوتِ قرآن پاک کے وقت سکون اور رحمت کا نزول ہوتا ہے۔
۴۲ عقیدہ ختم نبوت قرآن، حدیث اور اجماع تینوں سے ثابت ہوا ہے۔
۵۲ بہترین دعا نماز ہے۔
۶۲ سب سے پہلی لڑائی جو کفار سے ہوئی اسے غزوہ بدر کہتے ہیں اور آخری کو غزوہ تبوک کہتے ہیں۔
۷۲ نمود و نمائش بھی جھوٹ ہی کی ایک قسم ہے۔
۸۲ عقد کے معنی باندھنا اور گرہ لگانا کے ہیں۔
۹۲ عقیدہ کے معنی باندھی ہوئی چیز کے ہیں۔
۰۳ انسان کے پختہ اور اٹل نظریات کو عقائد کہا جاتا ہے۔
۱۳ تمام پیغمبروں نے اپنی تبلیٰغ کا آغاز عقائد کی اصلاح سے کیا۔
۲۳ اسلامی عقائد میں سب سے پہلا عقیدہ توحید کا ہے۔
۳۳ دنیا کا پہلا انسان عقیدہ توحید ہی کا قائل تھا۔
۴۳ سب سے پہلے انسان حضرت آدم عہ تھے۔
۵۳ شرک کے معنی حصہ داری کے ہیں۔
۶۳ شرک کی تین اقسام ہیں۔
۷۳ اللہ تعالی انسان کی شہ رگ سے بھی زیادہ قریب ہیں۔
۸۳ توحید کے بعد رسالت کا درجہ ہے۔
۹۳ نبی کے معنی ہیں خبر دینے والا۔
۰۴ انبیاءکی تعداد ایک لاکھ چوبیس ہزار بیان کی گئی ہے۔
۱۴ رسالت کے معنی پیغام پہنچانے کے ہیں۔
۲۴ رسول کے معنی پیغام پہچانے والے کے ہیں۔
۳۴ ملک کے معنی قاصد کے ہیں۔
۴۴ فرشتوں کے لئے لفظ رسول بھی استعمال ہوا ہے۔
۵۴ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ میرے بعد کوئی نبی نہیں آئے گا۔
۶۴ لفظ آخرت کے معنی بعد میں ہونے والی چیز کے ہیں۔
۷۴ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا میں لعنت کرنے والا نہیں۔
۸۴ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے خاندانی و قبائلی فخر کو مٹایا۔
۹۴ مسجد مسلمانوں کے لئے ایک عملی تربیت گاہ ہے۔
۰۵ نماز مساوات کا بہترین مظہر ہے۔

۱۵ صبر کے معنی روکنے اور برداشت کرنے کے ہیں۔
۲۵ استقلال کے لغوی معنی استحکام اور مضبوطی کے ہیں۔
۳۵ ابولہب حضور صلی اللہ علیہ وسلم کا چچا تھا۔
۴۵ ابو لہب کی بیوی کا نام ام جمیل تھا۔
۵۵ عفو درگزر ایک بہترین اخلاقی وصف ہے۔
۶۵ ذکر کے معنی کسی کو یاد کرنے کے ہیں۔
۷۵ ذکر کی افضل ترین شکل نماز ہے۔
۸۵ اسلام کی عمارت پانچ ستونوں پر اٹھائی گئی ہے۔
۹۵ ارکانِ اسلام میں سب سے اہم کلمہ شہادت ہے۔
۰۶ زکوة کے لغوی معنی پاک کرنے کے ہیں۔
۱۶ اللہ تعالی کے عطا کردہ معاشی نظام میں زکوة کو بنیادی اہمیت حاصل ہے۔
۲۶ زکوة کے آٹھ مصارف ہےں۔
۳۶ سونے کا نصاب ساڑھے سات تولے اور چاندی کا ساڑھے باون تولے ہیں۔
۴۶ حج کے لغوی معنی زیارت کا قصد کرنے کے ہیں۔
۵۶ یہ سفر ایک طرح سے سفرِآخرت کا نمونہ بن جاتا ہے۔
۶۶ والدین کا نافرمان جنت کی خوشبو سے محروم رہے گا۔
۷۶ جھوٹ بولنے والے کو اللہ تعالی کی لعنت کا مستحق ٹہرایا گیا ہے۔
۸۶ اسلام نے منافق کی دو اقسام بیان کی ہیں۔
۹۶ قرآن مجید ۳۲سال کی مدت میں آہستہ آہستہ نازل ہوا۔
۰۷ قرآن مجید۴۱۱سورتوں پر مشتمل ہے۔
۱۷ سارے قرآن کو تیس حصوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔
۲۷ حدیث کی مشہور کتابوں کو صحاح ستہ کہاجاتا ہے۔
۳۷ نماز سے مسلمانوں میں اجتماعیت کا شعور پیدا ہوتا ہے۔
۴۷ حج میں تمام عبادات کی روح شامل ہے۔
۵۷ جس میں وعدے کا پاس نہیں اس میں دین نہیں۔
۶۷ عبادت کی قبولیت کے لئے توحید لازمی شرط ہے۔
۷۷ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے آخری حج کو حجتہ الوداع کہتے ہیں۔
۸۷ قرآن مجید کی سب سے چھوٹی سورة سورة الکوثر ہے۔
۹۷ صفا و مروا کے پہاڑوں کے درمیان دوڑنے کو سعی کہتے ہیں۔
۰۸ توریت حضرت موسیٰ عہ پر ناذل ہوئی۔
۱۸ حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے خواہشاتِ نفس کے خلاف جہاد کرنے کو جہاد اکبر کہا ہے۔
۲۸ ہر شخص کے اعمال کا حساب رکھنے کے لئے دو فرشتے کراماً کاتبین مقرر کئے گئے ہیں۔
۳۸ قرآن کریم کے۵۵ متابادل نام خود آیاتِ کریمہ سے ماخوذ ہیں۔
۴۸ اسلام کے لغوی معنی حکم ماننا کے ہیں۔
۵۸ نماز اگر جسمانی عبادت ہے تو زکوة مالی عبادت ہے۔
۶۸ حدیث کے لغوی معنی خبر کے ہیں۔
۷۸ حاسد اپنی بھڑکائی ہوئی آگ میں خود جلتا ہے۔
۸۸ معلم کی حیثیت علم کی بارش کی سی ہوتی ہے۔
۹۸ آنحضرتﷺ کے قول اور فعل کو اصطلاح میں حدیث قولی اور حدیث فعلی کہتے ہیں۔
۰۹ نماز سن ۲ہجری میں فرض ہوئی۔
۱۹ توحید تمام عقائد کی روح ہے۔
۲۹ سجدہ تلاوت کی کل تعداد۴۱ہے۔
۳۹ پہلی وحی کا پہلا لفظ اقرا ہے۔
۴۹ اعمال کی بنیاد ایمان پر ہے۔
۵۹ دین اسلام ایمان اور عمل صالح کا مجموعہ ہے۔
۶۹ عبادت کی قبولیت کے لئے دعا کو لازمی قرار دیا گیا ہے۔
۷۹ اسلام کے لغوی معنی گردن جھکانے کے ہیں۔
۸۹ صلہ رحمی سے مراد رشتہ داروں سے حسن سلوک ہے۔
۹۹ تکبر کرنے والا دوسروں کو حقیر سمجھتا ہے۔
۰۰۱ اللہ تعالی کی عبادت کے بعد رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی اطاعت فرض ہے۔

Class XI, Islamiat, "مختصر سوال و جواب"

مختصر سوال و جواب

سوال۱ عملِ صالح کی تین اقسام بیان کیجئے۔
جواب عملِ صالح کی تین اقسام یہ ہیں:
  • معاملات
  • عبادات
  • اخلاقیات
سوال۲ شرک کی اقسام بیان کیجئے۔
جواب شرک کی تین اقسام یہ ہیں:
  • اللہ تعالی کی ذات میں شرک
  • اللہ تعالی کی صفات میں شرک
  • اللہ تعالی صفات کے تقاضوں میں شرک
سوال۳ جہاد کی اقسام بیان کیجئے۔
جواب جہاد کی چار اقسام ہیں:
  • جہاد بالمال
  • جہاد بالسیف
  • جہاد بالنفس
  • جہاد بالقلم / جہاد بالعلم
سوال۴ مکی صورتوں کی خصوصیات بیان کیجئے۔
جواب مکی صورتوں کی خصوصیات ذیل میں درج ہیں:
  • مکہ میں جو صورتیں نازل ہوئیں وہ زیادہ تر اصولوں اور کلیاتِ دین کے بارے میں ہیں۔
  • ان میں توحید، رسالت اور آخرت جیسے بنیادی عقائد پر زور دیا گیا ہے۔
  • ان میں عبرت و نصیحت کے واضح نشانات موجود ہیں۔
  • آخرت اور موت کے بعد کی زندگی کو ذہن نشین کرنے کے لئے نہایت موثر انداز اختیار کیا گیا ہے۔
سوال۵ صحاح ستہ کے نام لکھئے۔
  • صحیح بخاری
  • صحیح مسلم
  • سنن ابی داود
  • سنن ابنِ ماجہ
  • جامع الترمذی
  • سنن انسائی
سوال۶ زکوة کے مصارف بیان کیجئے۔
جواب زکوة کے مصارف یہ ہیں:
  • فقرائ
  • مساکین
  • عازمین
  • رقاب
  • مسافر
سوال۷ کلمہ طیبہ اور اس کا ترجمہ لکھئے۔
  • ترجمہ: نہیں سوائے اللہ کے کوئی معبود اور محمد صلی اللہ علیہ وسلم اس کے رسول ہیں۔
سوال۸ حب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے کیا مراد ہے؟
جواب حب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے مراد حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے محبت ہے لیکن محبت محض ظاہری اور رسمی مطلوب نہیں بلکہ ایسی محبت مطلوب ہے جو باقی کی تمام محبتوں پر غالب آجائے۔ جیسا کہ حدیث میں ہے: تم میں سے اس وقت تک کوئی شخص مومن نہیں ہوسکتا جب تک کہ میں اسے اس کے اپنے والدین، اپنی اولاد اور دنیا کے تمام لوگوں سے زیادہ محبوب نہ ہوجاوں۔
سوال۹ چار مشہور فرشتوں کے نام اور ان کے کا م تحریری کیجئے۔
جواب چار مشہور فرشتوں کے نام اور ان کے کام ذیل میں درج ہیں:
  • ضرت جبرائیل عہ انبیاءکے پاس وحی لانے کا کام کرتے تھے۔
  • حضرت میکائل عہ کے پاس بارش برسانے اور ہواوں کا نظام ہے۔
  • حضرت عزرائیل عہ کے ذمے جان دار مخلوق کی ارواح قبض کرنا ہے۔
  • حضرت اسرافیل عہ کے ذمے اللہ تعالی کے حکم سے قیامت کے دن صورپھونکنا ہے۔
سوال۰۱ قرآن مجید کے چار اسماءلکھئے۔
جواب قرآن مجید کے چار اسماءیہ ہیں:
  • الکتاب
  • نور
  • افرقان
  • العلم
سوال۱۱ حج کے چار فوائد تحریر کیجئے۔
جواب حج کے چار فوائد یہ ہیں:
  • حج کا اصل فائدہ یادِ الہی اور قرب خداوندی ہے۔
  • حج سے مختلف ممالک سے آئے ہوئے لوگ خرید و فروخت کرکے معاشی نفع کماتے ہیں۔
  • حج کا عظیم اجتماع ملت اسلامیہ کی شان و شوکت کا آئینہ دار ہوتا ہے۔
  • حج سے انسان کو دوسرے ممالک سے آئے لوگوں سے ملاقات کا موقع ملتا ہے۔ جس سے باہمی محبت پیدا ہوتی ہے۔
سوال ۲۱ منافق کی کیا پہچان ہے؟
جواب منافق کی پہچان یہ ہے کہ:
  • وہ وعدہ پورا نہےں کرتا۔
  • امانت میں خیانت کرتا ہے۔
  • جب لڑتا ہے تو گالیاں بکنے لگتا ہے۔
  • وہ جھوٹ بولتا ہے۔
سوال ۳۱ مدنی سورتوں کی خصوصیات تحریر کیجئے۔
جواب مدنی سورتوں کی خصوصیات درج ذیل ہیں:
  • یہ زیادہ تر عبادات و معاملات سے متعلق ہیں۔
  • ان میں حلال وحرام، فرائض و واجبات وغیرہ کے مسائل بیان کئے گئے ہیں۔
  • غزوات و جہاد، مالِ غنیمت، خراج اور حدود و قصاص کے تفصیلی احکام بھی مدنی سورتوں کے خاص مضامین ہیں۔
سوال ۴۱ پڑوسی کی اقسام تحریر کیجئے۔
جواب پڑوسی کی تین اقسام ہیں:
  • وہ پڑوسی جو رشتے دار بھی ہوں۔
  • وہ پڑوسی جو رشتہ دار یا ہم مذہب نہ ہوں۔
  • عارضی پڑوسی مثلاً ہم جماعت، ہم پیشہ وغیرہ ۔
سوال ۵۱ رحمة العالمین سے کیا مراد ہیں؟
جواب رحمة العالمین سے مراد حضورصلی اللہ علیہ وسلم ہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے دنیا کو اللہ تعالی کا پیغام پہنچا کر عذاب سے بچایا۔ آپ نوعِ انسان کے لئے رحمت تھے۔ اس طرح آپ تمام جہانوں کے لئے اللہ تعالی کی رحمت ثابت ہوئے۔
سوال ۶۱ استاد کے تین حقوق لکھئے۔
جواب استاد کے تین حقوق درج ذیل ہیں:
  • استاد کا حق ہے کہ اس کے طلبہ اطاعت گزار ہوں۔
  • طلبہ کو چاہئے کہ وہ اپنے استاد کا ادب و احترام کریں۔
  • طلبہ کو اپنے استاد سے بدتمیزی سے پیش نہےں آنا چاہئے۔
سوال ۷۱ نماز کے تین فوائد لکھئے۔
جواب نماز کے تین فوائد یہ ہیں:
  • نماز سے انسان پاک صاف رہتا ہے۔
  • نماز سے انسان وقت کا پابند ہوجاتا ہے۔
  • نماز سے انسان میں اللہ تعالی کا خوف پیدا ہوجاتا ہے جس سے وہ برائیوں سے بچا رہتا ہے۔
سوال ۸۱ انبیاءکرامکی تین خصوصیات تحریر کیجئے۔
جواب انبیاع کرام کی تین خصوصیات مندرجہ ذیل ہیں:
  • انبیاءکرام نیک، متقی اور عزم و ہمت والے ہوتے ہیں۔
  • وہ گناہوں سے پاک ہوتے ہیں۔
  • وہ اللہ تعالی کی تعلیمات لوگوں تک ٹھیک ٹھیک پہنچاتے ہیں۔
سوال ۹۱ صحابہ کرام کے ایثار کے بارے میں کوئی واقعہ تحریر کیجئے۔
جواب ایک جہاد کے لئے رسول اللہ کو سامان کی ضرورت ہوئی۔ ہر صحابی نے اپنی توفیق کے مطابق دیا۔ حضرت عثمان رضہ نے آدھے لشکر کا خرچہ برداشت کیا۔ حضرت عمر رضہ نے اپنے گھر کا آدھا سامان پیش کیا لیکن حضرت ابوبکر رضہ نے اپنے گھر کا سارا سازو سامان حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں پیش کردیا اور گھر میں کچھ نہ چھوڑا۔
سوال ۰۲ جہاد اکبر سے کیا مراد ہے؟
جواب انسان کو اطاعتِ الہی سے روکنے والی سب سے پہلی قوت انسان کی اپنی خواہشات ہیں۔ انہی خواہشات کے خلاف جہاد کرنے کو جہاداکبر کہتے ہیں۔ دوسرے لفظوں میں اپنے نفس کے خلاف جہاد کرنے کو حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے جہاد اکبر کا نام دیا ہے۔
سوال ۱۲ ارکانِ اسلام کے نام لکھئے۔
جواب اسلام کے ارکان درج ذیل ہیں:
  • نماز
  • روزہ
  • زکوة
  • حج
  • جہاد
سوال ۲۲ آسمانی کتابوں کے نام اور جن پر نازل ہوئیں بیان کریں۔
جواب آسمانی کتابوں کے نام اور جن پر نازل ہوئےں وہ یہ ہیں:
  • زبور حضرت داود عہ پر نازل ہوئی۔
  • نجیل حضرت عیسیٰ عہ پر نازل ہوئی۔
  • طوریت حضرت موسیٰ عہ پر نازل ہوئی۔
  • قرآن مجید حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر نازل ہوئی۔
سوال ۳۲ تقدیر سے کیا مراد ہے؟
جواب تقدیر سے مراد یہ ہے کہ اللہ تعلای ہی اسی کائنات کا خالق و مالک ہے۔ سب کچھ اسی کے قبضہ قدرت میں ہے۔ اس نے کائنات پیدا کرکے اس کا ایک اندازہ مقرر کردیا اسی چیز کا نام تقدیر ہے۔
سوال ۴۲ روزہ کے تین فوائد تحریر کریں۔
جواب روزہ کے تین فوائد مندرجہ ذیل ہیں:
  • روزے سے انسان وقت کا پابند ہوجاتا ہے۔
  • روزے سے انسان نماز کا پابند ہوجاتا ہے۔
  • روزے سے امیروں میں غریبوں کے لئے جذبہ ہمدردی و ایثار پیدا ہوجاتا ہے۔
سوال ۵۲ اصول اربعہ کے نام تحریر کریں۔
جواب اصول اربعہ کے نام مندرجہ ذیل ہیں:
  • الکافی
  • من لا یحضرہ الفقیہہ
  • الاستبصار
  • تہذیب الاحکام
سوال۶۲ زکوة کا نصاب لکھیں۔
جواب زکوة اس پر فرض ہوتی ہے جس کے پاس ساڑھے سات تولے سونا یا ساڑھے باون تولے چاندی یا اس کے برابر نقدی ہو۔
سوال ۷۲ غیبت کن صورتوں میں جائز ہے؟
جواب غیبت دو صورتوں میں جائز ہے ایک جو ظلم کے خلاف مظلوم کی فریاد کی جائے اور دوسری یہ کہ کسی فریب کار کے فریب کے بارے میں کی جائے۔

Class XI, Islamiat, "رحمت العالمین"

رحمت العالمین

حضور صلی اللہ علیہ وسلم بحیثیت رحمت العالمین
رحمت کے لفظی معنی مہربانی اور نرمی کے ہیں۔ کسی کی تکلیف کو دیکھ کر رقت طاری ہونا، حاجت مند کی حاجت روی کرنا، کسی کی بے چارگی میں اسکی چارسازی کرنا۔یوں تو یہ تمام جذبات انسانوں میں فطری طور پر ودیعت کئے گئے ہیں لیکن حضور صلی اللہ علیہ وسلم کو تمام جہانوں کے لئے رحمت بنا کر بھیجا گیا ہے۔ آپ کو اللہ نے قیامت تک آنے والی تمام نسلوں کے لئے رہبرو رہنما بنایا ۔ سورة انبیاءمیں ارشاد ہوتا ہے کہ:
اے نبی ہم نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو تمام جہانوں کے لئے رحمت بنا کر بھیجا۔
اس آیت میں لفظ العالمین استعمال ہوا ہے جس نے اپنے اندر کائنات و ارض و سموت کے تمام لوگوں کو سمو دیا ہے۔ اللہ نے اپنے لئے رب العالمین کا لفظ استعمال فرمایا ہے۔ اس کے معنی ہیں تمام جہانوں کا رب یعنی اس کی ربویت ہر ایک کے لئے ہے خوہ وہ مومن ہوں یا کافر، فرمانبردار ہوں یا نافرمان اسی طرح حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات گرامی تھی پوری کائنات کے لئے رحمت۔ حضرت ابو ہریرہ روایت کرتے ہیں کہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کیاگیا ہے:
یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم مشرکین کے لئے بددعا کیجئے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا مجھے لعنت کرنے والا بنا کر نہیں بھیجا گیا مجھے تو صرف رحمت بنا کر بھیجا گیا ہے۔
مومنین پر رحمت
حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی ذاتِ گرامی معاشرے کے ہر طبقے کے لئے رحمت بنا کر بھیجی گئی۔ لیکن آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی رحمت سب سے زیادہ نسلِ انسانی کی اس گروہ پر ہے جس کو اللہ نے ایمان کی دولت سے مالامال رکھا۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے ہر معاملے میں اپنی امت کے لئے سہولت کا خیال رکھا اور اس سلسلے مےں یہ عام اصول بیان فرمایا ہے:
”دین کوآسان کرکے پیش کرو مشکل بنا کر لوگوں کے سامنے نہ لاو حکم ہوا ہے کہ لوگوں کو رحمتِ الہی کی خوشخبری سناو اور عذاب کا ڈراوہ دے کر دین سے برکشتہ نہیں کرو۔
حضور صلی اللہ علیہ وسلم مومنین سے اتنی زیادہ محبت کرتے تھے جس کا اندازہ لگانا مشکل ہے۔ اور اس بات کاثبوت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث سے ہوتا ہے:
ہر نبی کی ایک دعا ضرور قبول ہوتی ہے اس لئے مےں چاہتا ہوں کہ اگر خدا کو منظور ہو تو میں اپنی ضرور قبول ہونے والی دعا کو قیامت کے دن اپنی امت کی شفاعت کے لئے محفوظ رکھوں گا۔
گناہ گاروں کے لئے رحمت
حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے جہاں مومنین پر شفقت کا برتاو روا رکھا گناہ گاروں کے ساتھ بھی شفقت فرمائی ان کی توبہ کی ترغیب دلاتے ہوئے فرمایا:
گناہ سے توبہ کرنے والا ایسا ہے گویا وہ (جس کا) کوئی گناہ نہ ہو۔
بیماروں کے لئے رحمت
حضورصلی اللہ علیہ وسلم کی ذات بیماروں کے لئے رحمت ہے ۔ مریض کی خبر گیری، غم خواری اور مزاج پرسی ایک عظیم انسانی فریضہ ہے۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کی تاکید اتنے پراثر انداز سے کی ہے کہ ایک مسلمان ہمہ وقت بیمار کی عیادت، خدمت اور تیمارداری کے لئے آمادہ نظر آتا ہے اس سلسلے میں متعدد احادیث موجود ہیں۔ نبی کریم کا ارشاد ہے:
جب کوئی صبح کو کسی بیمار کی عیادت کرتا ہے تو شام تک ملائقہ اس کی بخشش کی دعا کرتا ہی اور اگر وہ شام کو اس کی عیادت کرتا ہی تو وہ صبح تک اس کی بخشش کی دعا کرتا ہے۔
ایک اور جگہ حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں:
ایک مسلمان پر دوسرے مسلمان کے چند حقوق ہیں۔ جن میں سے ایک یہ ہے کہ جب وہ بیمار پڑے تو اس کی عیادت کی جائے۔
بچوں کے لئے رحمت
جہاں تک بزرگوں کے حقوق کا تعلق ہے، وہ دنیا کے ہر مذہب میں دئیے گئے ہیں۔ ان کا ادب و احترام اور خبر گیری کی تاکید کی گئی ہے۔ لیکن حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو اللہ تعالی نے تمام جہانوں کے لئے رحمت بنا کر بھیجا ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے بچوں سے محبت اور شفقت کی تعلیم و تربیت کے مطابق خصوصی اصول بیان فرمائے اور اس کو اجرو ثواب کا ذریعہ قرار دیا۔ بچوں کے حقوق کی وضاحت آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک انتہائی مختصر اور بلیغ فقرے میں یہ کہہ کر فرمائی:
جو ہمارے چھوٹوں پر شفقت نہ کرے اور ہمارے بڑوں کا ادب نہ کرے وہ ہم مین سے نہیں۔ بچوں کی تعلیم و تربیت کا حکم اللہ نے ان الفاظ میں دیا ہے:
اے ایمان والوں اپنے آپ کو اپنے اہل و عیال کو جہنم کی آگ سے بچاو۔
جانوروں کے لئے رحمت
حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات گرامی صرف انسانوں ہی کے لئے نہیں بلکہ جانوروں کے لئے بھی رحمت بن کر آئی۔ اسلام سے پہلے خود جانوروں سے برا سلوک کیا جاتا تھا اس کی مختلف صورتیں تھیں۔ جب کوئی مرجاتا تو اس کی سواری کے جانور کو قبر پر باندھ دیا جاتا تھااور اس کو کھانا نہ دیا جاتا تھا یہاں تک کہ وہ جانور سوکھ کر مرجاتا۔ ایک صحابی نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کیا۔ یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم میں بکری ذبح کرتا ہوں تو مجھے اس پر رحم آتا ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا:
اگر تم بکری پر رحم کرتے ہو تو اللہ تم پر رحم کرے گا۔
ایک مرتبہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اونٹ دیکھا جس کا پیٹ بھوک کی وجہ سے سکڑ گیا تھا آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
ان بے زبان جانوروں کے مقابلے میں خدا کا خوف کرو۔ ان پر سوار کرکے ان کو اچھی حالت میں رکھ کر سوار ہو۔ ان کو کھاو تو اچھی حالت میں رکھ کر کھاو۔

Class XI, Islamiat, "اسوہ حسنہ"

اسوہ حسنہ

حرفِ آغاز
خدائے بزرگ و برتر نے زمین کو انسانیت کی آماجگاہ بنادیا اور کن فیکون سے تخلیقِ کائنات کا کام انجام دیا اور طرح طرح کی مخلوقات بنائیں مگر انسان کو اشرف المخلوقات کا درجہ عطا کیا۔ اب انسانوں کی اخلاقی اور روحانی تربیت کے لئے انبیاءکا سلسلہ شروع ہوا۔ جن کو فضائل، اخلاق، عصمت و پاکیزگی، تقوی، شرم و حیا، احسان و کرم، عفودرگزر، صبروتحمل اور ایثارو قربانی کا فریضہ سونپا گیا۔
حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی حیات محفوظ ہے
یہ ایک اٹل حقیقت ہے کہ دنیا تمام مشہور لوگوں کے بارے میں جو اس دارِ فانی سے کوچ کرگئے ہیں بہت کم جانتی ہے۔ مثلاً تمام انبیاءکے تو نام تک سے لوگ واقف نہیں ہیں۔ اور چند انبیاءکرام جنہیں لوگ جانتے ہیں ان کے حالات قرآن مجید اور دوسری مذہبی کتب میں ناکافی ہےں اور اسی طرح عظیم شخصیتوں کے حالات ان کی کتابِ حیات سے بہت کم معلوم ہوئے۔
لیکن اگر پوری تاریخ عالم میں کوئی زندگی پوری محفوظ ہے تو وہ آخری نبی حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی ہے۔ آپ کی حیاتِ پاک کے تمام واقعات ایک ایک جزئیات کے ساتھ اسطرح جمع کئے گئے ہیں کہ اس کی مثال نہیں ملتی۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا ایک ایک قول و فعل دیانت داری کے ساتھ آج تک محفوظ ہے۔ حدیث کو ہی لئجئے تو دنیا کی کوئی زبان اور کوئی قوم فنِ حدیث جیسا ادب پیش نہیں کرسکتی۔
حفاظتِ حیاتِ نبی کی وجہ
آخر اس کی کیا وجہ ہے کہ حضور پاک صلی اللہ علیہ وسلم کی پوری زندگی تمام جزئیات کے ساتھ موجود ہے اور رہے گی تو اس کا جواب قرآن پاک اپنی ایک آیت میں پیش کرتا ہے:
تم لوگوں کے لئے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی میں بہترین نمونہ ہے۔
پوری انسانیت کے لئے اگر کسی کی زندگی معیار اور نمونہ ہے تو وہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی ہے۔ اسی لئے اس کو مکمل طور طر اللہ نے محفوظ کرلیا ہے۔ حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی حیاتِ پاک کو محفوظ رکھنا اس بات کی دلیل ہے کہ کامل نمونہ بس یہی ایک ذات ہے اور جس معاشرے یا فرد میں اس زندگی کا نمونہ موجود ہے وہاں کی فلاح اور نیکی کے پھول کھلتے ہیں۔
ایک دفعہ حضرت عائشہ رضہ سے کسی نے پوچھا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے اخلاق کیسے ہیں؟ انہوں نے اس میدان میں اپنے آپ کو عاجزو مجبور پاکر کہہ دیا:
کیا تم نے قرآن نہیں پڑھا جوکچھ قرآن میں ہے وہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت پاک میں ہے۔
انبیاءکے اخلاق کا مجموعہ
حضوراکرمصلی اللہ علیہ وسلم صرف ایک نبی ہی نہیں بلکہ تمام انبیاءکے اوصاف کا مجموعہ تھے۔ حضرت موسیٰ عہ کے معجزات، حضرت عیسیٰ عہ کی شفائ، حضرت یوسف عہ کا حسن و جمال، حضرت زکریا عہ کی حمدوثنائ، حضرت داود عہ اور حضرت ایوب عہ کا صبروشکر، حضرت ابراہیم عہ کی قربانی اور ہجرت ، حضرت اسماعیل عہ کا صبر اور ایمانداری کے علاوہ تمام انبیاع کی صرف ایک شخص کی ذات میں جمع ہوگئیں تھیں۔
بقول شاعر
حسنِ یوسف، دمِ عیسی یدِ بیضی داری
آنچہ خوباں ہمہ دارند تو تنہا داری
آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات مکارمِ اخلاق کی جملہ اوصاف کا مجموعہ تھی۔ کون سی عادی اور اخلاق تھا جو آپ صلی اللہ علیہ وسلم میں موجود نہ تھا۔ کافر ہو یا مسلمان، امیر ہو یا غریب، سپہ سالار ہو یا قاضی، باپ ہویا شوہر، تاجر ہو یا حاکم غرض سب کے لئے آپ کے اخلاق نمونہ کامل ہیں۔ اللہ کا ارشاد بالکل بجا ہے کہ:
اے ایمان والو! تمہارا رسول جو چیز دے اسے خوشی سے قبول کرلو اور جس سے تمہیں روکے اس رک جاو۔
رحمتِ عالم
قرآن پاک میں ارشاد ہوتا ہے کہ:
صلی اللہ علیہ وسلمہم نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو تمام لوگوں کے لئے خوشخبری سنانے والا اور ڈرانے والا بنا کر بھیجا۔
اس سے ظاہر ہوا کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم تمام جہانوں، انسانوں اور قوموں کے لئے دنیا میں تشریف لائے تھے۔ حضور پاک صلی اللہ علیہ وسلم کی رحمت اور رسالت، زمان و مکاں کی قید سے آزادی تھی۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی رحمت و نبوت کامل ہے اور ہر انسان کے لئے عام ہے۔ سب کے لئے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات رحمت کا سایہ تھی۔ حضرت ابو ہریرہ فرماتے ہیں کہ:
لوگوں نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے کہا کہ مشرکین کے لئے بدعا کیجئے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا میں بدعا کے لئے نہیں بلکہ رحمت بناکر بھیجا گیا ہوں۔
صادق و امین
رسول پاک صلی اللہ علیہ وسلم کی صداقت و امانت کے وہ لوگ بھی معترف تھے جو آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے بدترین دشمن تھے۔ قریش نے باوجود تمام عداوت و سنگدلی کے حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے اخلاق و کردار پر کبھی انگلی نہیں اٹھائی۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی جوانی کا زمانہ اس قدر پاکیزگی، شرافت اور صداقت کے ساتھ گزرا کہ نبوت سے پہلے ہی آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو صادق و امین کا لقب دے دیا گیا تھا۔ قریش نے طرح طرح سے آپ کو جھٹلایا مگر نجاشی کا دربار ہو یا مکہ کی گلیاں، ابو سفیان ہو یا ابو جہل سب ہر جگہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی امانت و صداقت کی گوای دیتے تھے۔
سخاوت و فیاضی
جودوسخا کا یہ عالم تھا کہ گھر میں آٹے کے سوا کھانے کی کوئی چیز نہ تھی مگر سائل کو سارا آٹا عطا کردیا۔ اسی طرح ایک مہمان کو بکری کا سارا دودھ پلا دیا ۔ کئی روز کے فاقوں کے باوجود گھر میں ذراسا بھی کچھ ہوتا تو سائل کو عطا کردیتے۔ گھر میں اس وقت تک نہ جاتے جب تک سائل کو گھر میں رکھی ہوئی نقد رقم یا خیرات نہ کردی جاتی۔ اکثر اشرفیاں اور مال و دولت خراج کی شکل میں آتیں تو سب تقسیم کرکے دامن جھاڑ کر کھڑے ہوجاتے۔
حضور صلی اللہ علیہ وسلم سب لوگوں سے زیادہ سخی تھے خود فقیرانہ زندگی بسر کرتے اور سخاوت میں بادشاہوں کو شرمندہ کرتے تھے۔
دشمن سے اپنا انتقام لینا انسانی فطرت ہے مگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم عفوودرگزر سے کام لیتے تھے۔ یہاں تک کہ بدترین دشمن، کافروں اور مشرکوں تک کو معاف کیا اور ان سے کہیں انتقام نہ لیا بلکہ ان کے حق میں دعا بھی کی۔ غزوہ احد میں زخمی ہوئے مگر معاف کیا۔ طائف میں جسِ مبارک خون سے لہولہان ہوگیا۔ مگر ان کو بھی معاف کیا۔ فتح مکہ کے موقع پر سب آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے قدموں تلے تھے مگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے عام معافی کا اعلان کیا اور فرمایا:
آج تم پر کوئی الزام نہیں۔
مشرکوں کے لئے بھی کبھی بددعا نہ کی بلکہ یہ فرمایا:
میں لعنت کرنے نہیں بلکہ رحمت کرنے کے لئے بھیجا گیا ہوں۔
احسان مندی
ہمیشہ احسان کا بدلہ احسان سے دیتے تھے۔ نجاشی نے مسلمانوں کے ساتھ بہت اچھا سلوک کیا تھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی اس کے ایک دفعہ فکے ساتھ بہت زیادہ حسنِ سلوک کیا۔
خاکساری، خوش خلقی و سادگی
حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم کبھی بھی اپنی ذات کو دوسروں سے برتر اور بلند نہیں سمجھتے تھے۔ غرور و تکبر کسی قسم کی برائی آپ کو چھو کر بھی بہ گزری تھی۔ بادشاہوں اور حاکموں کو فرمان بھیجنے والا سادگی و خاکساری کا پیکر ہے۔ کئی کئی دن فاقے کرتا ہے اپنے ہاتھ سے مالِ غنیمت تقسیم کرتا ہے اور خود محنت و مشقت سے اپنی روزی حاصل کرتا ہے۔ یہ اس شخص کا پیکر ہے جس نے غرض ساری دنیا پر احسانِ عظیم کیے مگر کبھی کسی کا احسان نہیں اٹھایا۔
غلاموں، یتیموں اور ناداروں کا والی
حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے غلاموں کے ساتھ نرمی اور محبت کا سلوک کرنے کی تلقین کی اور فرمایا:
جو خود کھاو انہیں بھی کھلاو اور جو خود پہنو وہی انہیں بھی پہناو۔
ایک اور جگہ ارشادِ نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے کہ:
َغلاموں کو دن میں ستر دفعہ معاف کرو۔
یتیموں اور ناداروں کے لئے حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے بار بار حسنِ سلوک کی تاکید فرمائی ہی کیونکہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم خود بھی ان سے بے حد اچھا سلوک کرتے تھے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ:
مجھے مسکین زندہ رکھ، مسکین اٹھا اور ان کے ساتھ میرا حشر کر۔
غیر مسلموں کے ساتھ حسنِ سلوک
آپ صلی اللہ علیہ وسلم غیر مسلموں سے بھی عزت، نرمی اور محبت کا سلوک کرتے تھے۔ اکثر یہودی کافر اور مشرک آپ کے پاس آتے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے بداخلاق سے پیش آتے تھے مگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی روشن جبیں پر بھی ملال کی گرد نہیں نظر نہیں آئی بلکہ ان کے لئے فرماتے تھے کہ:
کوئی مسلمان کسی غیر مسلم پر ظلم کرے گا تو خدا کی عدالت میں قائم ہونے والے والے مقدمے میں غیرمسلم کا وکیل بن کر کھڑا ہوں گا۔
عورتوں، بچوں اور حیوانات کے ساتھ سلوک
عورتوں کو ذلت، ظلم و ستم کے پنجے سے آزادکیا ان کے حقوق مقرر کئے اور ہر حیثیت سے ان کا درجہ بلند فرمایا۔
ارشادِ نبوی ہے کہ:
دنیا کی بہترین متاع نیک کردار خاتون ہے۔
ایک اور جگہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم عورت کی عظمت بیان فرماتے ہوئے کہتے ہیں:
جنت ماں کے قدموں تلے ہے۔
آپ صلی اللہ علیہ وسلم بچوں کو خاص توجہ اور محبت دیتے تھے اکثر راہ چلتے بچوں کو سلام کرتے اور اپنی سواری پر بٹھا لیتے۔ موسم کا سب سے چھوٹا پھل سب سے چھوٹے بچے کو عطا کرتے تھے۔ حیوانات پر ظلم کرنا، ان کو بھوکا رکھنا اور ضرورت سے زیادہ کام لینا آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو سخت ناپسند تھا۔
عدل و انصاف
قرآن مجید میں ارشادِ باری تعالی ہے کہ:
اے مسلمانوں! عدل و انصاف کے ساتھ گواہی دیا کرو۔
اکثر غیر مسلموں کے مقدمے بھی آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے لائے جاتے تھے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم انصاف سے کام لے کر ان کے حق میں فیصلہ فرمادیا کرتے تھے۔ جو سزا مسلمانوں کے لئے تھی وہی غیر مسلم کے لئے بھی تھی۔ غیر مسلم پر زیادتی عاقبت کی بربادی کا سبب ہے۔
آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی پوری زندگی صبروتحمل کا نمونہ تھی۔ کفار نے ظلم و ستم کی حد کردی مگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی صبروتحمل کی حد کردی۔ ہجرت کی تو صبر کیا، دشمن کی گالیاں سنیں تو تحمل کا مظاہرہ کیا۔ جنگ ہو یا امن، خوشحالی ہو یا بدحالی، راحت ہو یا مصیبت غرضیکہ صبروتحمل کا دامن ہاتھ سے نہ چھوڑا۔ خوفِ خدا اور قربِ الہی
خوفِ خدا کا یہ عالم تھا کہ تیز ہوا بھی چلتی تو چہرہ فق ہوجاتا۔ اس طرح دعا مانگتے جیسے کوئی بھکاری ہاتھ پھیلارہا ہو۔ اکثر نماز میں طویل صورتیں پڑھتے اور خوفِ خدا سے روتے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم سب سے زیادہ خوفِ خدا رکھنے والے اور مغفرت طلب کرنے والے بندے تھے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے تھے کہ:
میں خدا سے سب سے زیادہ ڈرانے والا ہوں۔
قربِ الہی کا یہ عالم تھا کہ شب معراج سورة المنتہی کو پیچھے چھوڑ دیا اور سماعت کا یہ عالم تھا کہ لوح محفوظ پر قلم چلنے کی آواز سنی۔
پاکیزگی کردار
حضورپاک صلی اللہ علیہ وسلم کا بچپن، جوانی اور نبوت کے بعد کی زندگی ایسی لطیف، پاک و صاف تھی کہ عرب معاشرے کی غلاظت میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے کردار کی خوشبو چاروں طرف پھیلی ہوئی محسوس ہوتی تھی۔ پھولوں کی پتیاں بہت نازک اور پاک و صاف ہوتی ہےں۔ قوس قزاح بہ اچھوتی اور حسین ہوتی ہے چاندنی بے حد اجلی اور بے داغ نظر آتی ہے مگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی ان سب چیزوں سے زیادہ حسین اور پاکیزہ تھی جس کا مقابلہ دنیا کی کوئی چیز نہیں کرسکتی تھی۔ مکے میں جگہ جگہ اخلاق سوز کام ہوتے تھی مگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا دامن اس طرح صاف و شفاف تھا جیسے کسی کا دامن پانی میں جانے کے باوجود خشک اور صاف ستھرا رہے۔ آپ انسانِ کامل تھے۔ اگر ہم دین و دنیا کی فلاح اور سکون چاہتے ہیں تو ہمیں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے اخلاق حسنہ کی تقلید کرنی چاہئے۔

Class XI, Islamiat, "حقوق العباد"

حقوق العباد

حقوق سے مراد
حقوق جمع ہے حق کی جس کا مطلب ہے لازمی اور ضروری۔ حقوق دو قسموں کے ہوتے ہیں:
(۱) حقوق اللہ
(۲) حقوق العباد
(۱) حقوق اللہ
اللہ نے حضور صلی اللہ علیہ وسلم اور قرآن مجید کے ذریعے اپنے سرے حقوق بندوں کو بتادیئے ہیں کہ اللہ کے سوا کسی کی عبادت نہ کرو اور تمام وہ کام کرو جس کا اللہ اور رسول نے حکم دیا۔
(۲) حقوق العباد
عباد جمع ہے عبد کی جس سے مراد ہے انسان یا بندہ۔ اس طرح حقوق العباد کا مطلب ہے بندوں کے لئے ضروری یعنی حقوق۔ حقوق العباد میں دنیا کے ہر مذہب، ہر ذات و نسل، ہر درجے اور ہر حیثیت کے انسانوں کے حقوق آجاتے ہیں۔ اگر ہم عزیزوں کے حقوق ادا کریں تو اس کے ساتھ غیروں کے حقوق بھی ادا کریں۔ غلام اگر مالک کی خدمت کرے تو مالک بھی غلام کا پورا پورا خیال رکھے۔ والدین اگر اولاد کے لئے اپنی زندگی کی ہر آسائش ترک کردیں تو اولاد بھی ان کی خدمت اور عزت میں کمی نہ کرے یہی اسلام کی تعلیم ہے پوری انسانیت کے لئے ۔ حقوق العباد میں مختلف حیثیت اور درجات کے لوگوں کے حقوق آجاتے ہیں۔
تمام انسانوں کے لئے حقوق
جب ہم انسانی حقوق کا ذکر کرتے ہےں تو اس میں مخصوص قسم کے لوگوں کے حقوق نہیں آتے بلکہ پوری انسانیت ہماری نظر کرم اور توجہ کی منتظر ہوتی ہے۔ اسلام نے پوری انسانیت کے حقوق ادا کرنے پر اس قدر زور دیا ہے کہ کسی بھی مذہب میں کچھ نہیں کہا گیا اور یہی وجہ ہے کہ مسلمان قوم کو بہترین امت کہا گیا ہے۔
مسلمان اس لئے سب سے بہترین امت ہیں کیونکہ وہ لوگوں کو نیکی کی ہدایت دیتے ہیں اور برائی سے روکتی ہیں۔
میں اپنے حقوق کو معاف کردوں گا مگر بندوں کے حقوق کی معافی نہیں دے سکتا۔
والدین کے حقوق
قرآن پاک نے والدین کے حقوق پر سب سے زیادہ زور دیا ہے۔ ارشادِ باری تعالی ہے کہ:
ماں باپ کی خدمت گزاری اچھی طرح کرو۔
آپ صلی اللہ علیہ وسلم کہہ دیجئے کہ جوکچھ اپنے مال سے خرچ کروگے اس میں والدین کا بھی حق ہے۔
حدیثِ نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے:
ماں باپ کا نافرمان جنت کی خوشبو سے محروم رہے گا۔
حضور پاک صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی والدین نے ساتھ عزت و احترام محبت اور خدمت کی سخت تاکید کی تھی۔ ارشادِ نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے:
تمہاری جنت تمہارے والدین ہیں اگر وہ خوش ہیں تو تم جنت میں جاو گے۔
اولاد کے حقوق
ماں باپ جس طرح اولاد کی پرورش، خدمت اور تعلیم و تربیت کرتے ہیں وہ اولاد کا حق ہے۔ اولاد کی بہترین پرورش اور تعلیم و تربیت ماں باپ کا فرض بن جاتا ہے۔ ایک حدیث اس بات کو اس طرح ثابت کرتی ہے۔
باپ جو کچھ اپنی اولاد کو دیتا ہے ان میں سب سے بہتر عطیہ اچھی تعلیم و تربیت ہے۔
عزیزوں اور قرابت داروںکے حقوق
ہر انسان کے عزیز و اقارب ضرور ہوتے ہیں اور زندگی بھر ان سے تعلق قائم رہتا ہے۔ اللہ نے ان کے بہت سے حقوق مقرر فرمادئیے ہیں:
جوکچھ اپنے مال میں سے خرچ کروگے اس میں والدین کا بھی حق ہے اور قرابت داروں کا بھی۔
حضورپاک صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی عزیزوں اور رشتہ دارون کے حقوق مقرر کردئیے اور فرمایا:
رشتہ داروں سے تعلق توڑنے والا جنت میں نہیں جائے گا۔
اس طرح یہ بات ظاہر ہوگئی کہ قرآن مجید اور احادیث نے عزیزوں اور رشتہ داروں کے بہت سے حقوق مقرر فرمادئیے ہیں۔ یعنی ان کی خوشی اور غم میں شریک ہونا، غریب رشتہ داروں کی مدد کرنا اور اسی طرح کے بہت سے ایسے کام کرنا جن سے رشتہ داروں سے تعلقات خوشگوار قائم رہیں ہمارے فرائض میں شامل ہیں۔
ہمسایوں کے حقوق
ہمسائے کئی قسم کے ہوتے ہیں۔ ایک وہ جو ہمارے گھر کے بالکل نزدیک ہوتے ہیں اور عزیز نہیں ہیں۔ دوسرے وہ جو عزیز بھی ہوں اور تیسرے وہ جو ہمارے گھر سے ذرا دور رہتے ہوں۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے سب سے زیادہ زور ان ہمسایوں پر دیا ہے جو گھر سے بالکل نزدیک رہتے ہےں۔ ان کا ہم پر حق سب سے زیادہ ہے اور وہ ہماری توجہ کے سب سے زیادہ مستحق ہیں۔ ہمیں کوئی ایسا کام نہیں کرنا چاہئے جو ہمارے ہمسایوں کو تکلیف پہنچائے۔ حضورپاک صلی اللہ علیہ وسلم ہمسایوں کے بارے میں ارشاد فرماتا ہے کہ:
اپنے گھر کی دیواریں اتنی اونچی نہ کرو کہ ہمسایوں کی دھوپ اور روشنی رک جائے۔
اللہ اور رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمسایوں کے حقوق کے بارے میں بہت زیادہ تاکید فرمائی ہے۔ یہاں تک کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے تو بار بار ہمسایوں کے حقوق اس انداز میں مقرر فرمائے کہ یہ ڈر ہوا کہ کہیں وراثت میں ان کا حق نہ مل جائے۔ لہذا ہمیں ہمسایوں سے حسنِ سلوک سے پیش آنا چاہئے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے جس سے ہمسایوں کے حقوق کی مکمل وضاحت ہوجاتی ہے:
کوئی شخص اس وقت تک مومن نہیں ہوسکتا جب تک وہ خود پیٹ بھر کے کھالے اور اس کا پڑوسی بھوکا رہ جائے۔
استادوں کے حقوق
حدیثِ نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے:
مجھے معلم بنا کر بھیجا گیا ہے۔
اسلام نے تعلیم حاصل کرنے پر بہت زور دیا کیونکہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کو جو پہلا پیغام ملاتھا وہ لفظ پڑھو سے ملا تھا۔ علم انسان کے لئے اس قدر اہم چیز ہے کہ ماں کی گود سے لے کر قبر تک جاری رہتا ہے اور ہرشخص یعنی مردوعورت، جوان و بوڑھے پر ایک فرض کی طرح عائد کیا گیا ہے۔
جب علم کی اس قدر اہمیت ہے تو معلیم کی اہمیت بھی کچھ کم نہیں ہوسکتی۔ مختصراً یہ کہ والدین جو ہماری پیدائش اور تعلیم و تربیت کے ذمہ دار ہوتے ہیں۔ اور معلم جو ہماری نشونما کے ذمہ دار ہوتے ہیں تو والدین کی طرح سے ہی معلم بھی عزت و احترام کے مستحق ہیں۔ مندرجہ ذیل اقتباس سے معلم اور طالبعلم کے درمیان رشتہ اور حیثیت کی اچھی طرح وضاحت ہوتی ہے:
معلم کی حیثیت بارش جیسی ہوتی ہے اور طالبعلم کی حیثیت زمین جیسی جو بارش کو جذب کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ جو زمین بارش کی فیض و برکات سے سرسبزو شاداب ہوجاتی ہے اس کا مطلب ہوا کہ زمین نے پانی کو اپنے اندر جذب کرلیا جو زمین بارش کے پانی کو ضائع کردیتی ہے وہ بنجر ہوجاتی ہے۔ اسی طرح طالبعلم علم کی بارش کو اپنے اندر جذب کرلیتا ہے وہ خوب سیراب ہوجاتا ہے۔ اور اس کا استاد اسکو آگے جاتا ہوا دیکھ کر حسد نہیں کرتابلکہ خوش ہوتا ہے۔ مسلمانوں میں اس بات کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ پہلے زمانے میں شاگرداستاد کے نام کو اپنے نام کا حصہ بنالیتے تھے۔
غلاموں، ناداروں، مسکینوں اور مفلسوں کے حقوق
حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اس مظلوم طبقے کے حقوق اچھی طرح سمجھائے، مقرر کیے اور ادا کئے۔ یہ طبقہ اسلام سے قبل بڑی ذلت آمیز زندگی گزارتا تھا۔ مگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے مختلف احادیث میں ان سے کے حقوق مقرر کئے:
بیماروں کی عبادت کرنا ان کا حق ہے، یتیموں کی کفالت کرنا ان کا حق ہے۔
حرفِ آخر
حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے تمام انسانوں کی بہتری اور بقاءکے لئے اپنے اعمال، کردار اور اخلاق و اقوال سے ایسا نمونہ پیش کیا جو قیامت تک کے لئے سب کی رہبری کرتا رہے گا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم رحمتِ عالم تھے۔ یہی وجہ تھی کوئی بھی طبقہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی توجہ اور حسن سلوک سے محروم نہ تھا۔ اپ صلی اللہ علیہ وسلم سب سے پہلے خود حقوق ادا کرتے اور پھر دوسروں کو تاکید فرماتے تھے۔

Wednesday, September 12, 2012

Class XI, Islamiat, "مساوات"


مساوات کا مفہوم
مساوات کے لفظی معنی برابری کے ہےں لیکن اس کا یہ مفہوم ہرگز نہیں نکلتا کہ تمام افراد کو اعلی اور ادنی خدمات کا ایک ہی معاوضہ دیا جائے بلکہ شریعت کے حکم کے مطابق لوگوں سے موقع کے حصول میں مساوات بڑھتی جائے۔
مساوات کی اقسام
مساوات کی دو اقسام قابلَ غور ہیں:
(۱) قانونی مساوات
(۲) معاشرتی مساوات
(۱) قانونی مساوات
قانونی مساوات سے مراد یہ ہے کہ کوئی شخص مفلس ہو یا خوشحال، کالا ہو یا گورا، عالم ہو یا جاہل قانون سے بالا تر نہیں۔ اگر اس سے کوئی جرم سرزد ہوتا ہے تو اس کی حیثیت اور دولت کے بناءپر کوئی رعایت نہ برتی جائے، حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے آخری خطبے مےں ارشاد فرمایا ہی کہ:
کسی عربی کو عجمی پر اور عجمی کو عربی پر کوئی فضیلت نہیں اور کسی کالے کو گورے اور گورے کو کالے پر سوائے تقوی کے۔
(۲) معاشرتی مساوات
معاشرتی مساوات کا مفہوم یہ ہے کہ اجتماعی زندگی میں کسی کو اولیت حاصل نہیں ہے بزرگی اور عظمت کا معیار صرف تقوی ہے۔
بے شک خدا کے نزدیک سب سے زیادہ تم میں عزت والا وہ ہے جو تم میں سب سے زیادہ تقوی والا ہے۔
بقول شاعر
ایک ہی صف میں کھڑے ہوگئے محمود ایاز
نہ کوئی بندہ رہا نہ کوئی بندہ نواز
اسوة رسول اور مساوات
حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی نظر میں سب برابر تھے امیر، غریب، آقا غلام، صغیر و کبیر سب برابر تھے۔ عربی اور عجمی میں کوئی تفریق نہ تھی آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی حیاتِ طیبہ میں ایسی پچاسوں مثالیں مل جائیں گی جن سے ظاہر ہوتا ہے کہ آپ کا عمل ہر موقع پر مساویانہ رہا۔ حضور کا یہ طریقہ تھا کہ مجلس میں کوئی چیز تقسیم فرماتے تو دائیں جانب سے شروع کرتے بعض اوقات یہ بھی ہوتا کہ دائیں جانب عام لوگ ہوتے اور بائیں جانب معززین بیٹھتے لیکن آپ صلی اللہ علیہ وسلم اپنا طریقہ کبھی بھی نہ بدلتے۔
حضورپاک صلی اللہ علیہ وسلم کے مساویانہ رویہ کی مثال
غزوہ بدر میں سواریاں کم تھیں۔ تین افراد کے حصے میں ایک سواری آئی لہذا صحابی باری باری اترتے۔ آپ صلی اللہ علیہ سلم ان کے ساتھ پیدل چل رہے تھے۔ صحابہ رضہ حاضر ہوتے اور خواہش ظاہر کرتے کہ ہم آپ کے بدلے پیدل چل لیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرماتے:
نہ تم مجھ سے زیادہ پیادہ پا نہ میں تم سے کم ثواب کا محتاج ہوں۔
غزوہ بدر میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے چچا حضرت عباس بھی قیدی بن کر آئے۔ چونکہ وہ آپ سے قرابت داری رکھتے تھے اس لئے صحابہ نے اس خواہش کا اظہار کیا کہ ان کے فدیے کی رقم معاف کردی جائے۔ لیکن آپ نے اس بات کو پسند نہ فرمایا اور حکم دیا کہ ایک درہم بھی معاف نہ کرو۔
حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے جو آخری خطبہ دیا اس میں معاشرے کے مختلف طبقات کے ساتھ حسنِ سلوک کی تاکید کی ہے۔
قبیلہ مخزوم کی ایک عورت چوری کے الزام میں گرفتار ہوئی۔ اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کے باتھ کاٹ ڈالنے کا حکم دے دیا۔یہ فیصلہ لوگوں کو گوارہ نہ تھا ان کا خیال تھا کہ اس طرح خاندان کی بدنامی ہے۔ چنانچہ حضرت اسامہ رضہ کو جن سے حضور صلی اللہ علیہ وسلم بے انتہا محبت کرتے تھے سفارش کے لئے بھیجا گیا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے جواب میں فرمایا:
اسامہ تم کیا حضورِ خداوندی میں سفارش کرتے ہو۔
اس کے بعد آپ نے لوگوں کو جمع کرکے فرمایا:
پچھلی قومیں اسی طرح ہلاک ہوئیں جب ان میں کوئی معزز آدمی جرم کرتا تو نظر انداز کردیتے اور جب کوئی معمولی آدمی جرم کرتا تو اس کی سزا دیتے۔ خدا کی قسم اگر حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی بیٹی چوری کرتی تو اس کے ہاتھ بھی کاٹ دئیے جاتے۔

Class XI, Islamiat, "اطاعتِ رسول صلی اللہ علیہ وسلم"

اطاعتِ رسول صلی اللہ علیہ وسلم

رسولِ خدا اور اس کے بندوں کے درمیان ایک واسطہ ہے جس کے ذریعے خدا اپنے احکام بندوں تک پہنچاتا ہے اس حقیقت کے پیشِ نظر دین و دنیا میں انسان کی کامیابی صرف ایسے اعمال میں مضمر ہے جن سے خدا کی خوشنودی حاصل ہو۔ اللہ نے رسول کو انسانوں کی ہدایت کے لئے ذریعہ قرار دیا ہے۔ رسول انسانوں کو خدا کی رضا حاصل کرنے کے طریقے بتاتا ہے اور ان باتوں سے روکتا ہے جن سے خدا ناخوش ہوتا ہے۔
رسول دین اور شریعت کے طور پر جو کچھ لوگوں کے سامنے پیش کرتا ہے وہ اللہ کی طرف سے ہوتا ہے اس میں رسول کی مرضی شامل نہیں ہوتی۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ دیکھ کر کہ پچھلی امتوں نے اپنے انبیاءکی تعظیم و کریم کرتے کرتے انہیں خدائی کے مرتبے تک پہنچا دیا۔ اس بات کا بڑا خیال رکھا کہ کوئی شخص آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی ایسی بے جا تعظیم نہ کریں جس سے فتنہ پیدا ہو۔ کئی بار لوگوں نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے سجدہ کرنے کی اجازت چاہی لیکن آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے سختی سے روک دیا اور بار بار خدا کے سامنے اپنی بندگی اور بے چارگی کا اعلان کیا۔ بعض لوگوں نے کہنا شروع کردیا کہ نبی کا کام اس کے سوا کچھ نہیں کہ وہ اللہ کی کتاب انسانوں تک پہنچا دے اور بس لیکن رسولوں کا کام اتنا ہی ہوتا تو خدا یہ کام دوسروں سے بھی لے سکتا تھا۔ آخر اس کے لئے یہ کیا مشکل تھا کہ لوگوں پر لکھی لکھائی کتابیں نازل کردیتا۔ یا فرشتوں کے ذریعے کتب بھیج دیتا۔
اس طرح حضرت نوح عہ نے فرمایا:
میں تم سے یہ نہیں کہتا کہ میرے قبضے میں خدا کے خزانے ہیں اور نہ میں غیب کا علم رکھتا ہوں۔ اور نہ میں یہ کہتا کہ میں فرشتہ ہوں۔
لیکن چونکہ شہادت حق کا کام بڑا وسیع ہے۔ لہذا اللہ تعالی نے انبیاءاور رسول بھیجے۔ ان انبیاءکی ذمہ داری اور ان کے مناسک کیا تھے۔ اس سلسلے مےں ہم قرآن مجید سے رہنمائی حاصل کریں گے۔ اس میں انبیاءکی کیا حیثیت بیان کی گئی ہے۔
قابلِ اطاعت
قرآن مجید کی رو سے نبی کی مکمل اطاعت اور پیروی ضروری ہوتی ہے اور دین و شریعت کے دائرے میں وہ جو کچھ کہتا ہے ایک مومن کا فرض ہے کہ اس کی تعمیل میں حیل و حجت نہ کرے اور مصلحت اور خواہ اس کی سمجھ میں آئے نہ آئے۔ ہر صورت میں یقین رکھے کہ خیر ہے اور سراپا حق ہے۔ ارشادِ باری تعالی ہے کہ:
ہم نے جس رسول کو بھی بھیجا اس لئے بھیجا کہ ازن خداوندی کے مطابق اس کی اطاعت کی جائے۔
پھر یہ اطاعت بھی صرف ظاہر کی حد تک نہیں ہونی چاہئے۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے حقِ اطاعت کا تذکرہ کرتے ہوئے اللہ تعالی فرماتا ہے کہ:
پس اے نبی تمہارا رب گواہ کے کہ یہ لوگ مومن نہیں ہوسکتے جب تک آپس کے تمام معاملات میں تمہیں حکم نہ بتائیں اور پھر تمہارے فیصلہ پر بلا کسی تنگ دلی کے آمادگی کے ساتھ سر تسلیم خم نہ کردیں۔
اور یہ بات عقل کے مطابق بھی ہے۔ اسی لئے اگر انسان کے لئے اللہ تعالی کے احکام کو جاننے کا واحد ذریعہ نبی ہی ہے تو نبی کی کامل اطاعت اور پیروی کے بغیر اللہ کی اطاعت و بندگی کی کوئی شکل نہیں رہ جاتی یہی وجہ ہے کہ ہر نبی نے اپنی دعوت کے ساتھ یہ مطالبہ کیا:
اللہ سے ڈرو اور میری اطاعت کرو۔
اور یہ بھی فرمایا گیا کہ:
جس نے رسول کی اطاعت کی اس نے اللہ کی اطاعت کی۔
شارعِ کتاب اللہ
اللہ تعالی کی شریعت چونکہ ہمیشہ رہنے کے لئے ہے لہذا کتاب اللہ میں طریقہ اور اصول دیا گیا ہے اور اللہ تعالی کی شریعت چونکہ ہمیشہ رہنے کے لئے ہے چنانچہ کتاب اللہ میں دیا گیا طریقہ اور اصول اور اللہ کے پیغمبر کے ذمے یہ کام دیا گیا ہے کہ وہ ان کی تشریح کریں۔ سورة انحل میں ارشاد ہوتا ہے کہ:
اور ہم نے یہ ذکر (قرآن) تمہاری طرف اس لئے نازل کیا ہے تاکہ تم لوگوں کے لئے اس ہدایت کو واضح کردو جو ان کی طرف اتاری گئی ہے۔
یہ بات ظاہر ہے کہ تشریح خود کتاب کے الفاظ پڑھ کر سنا دینے سے نہیں ہوتی بلکہ تشریح کرنے والا اس کے الفاظ سے زائد بھی کچھ کہتا ہے تاکہ سننے والا بھی کتاب کا مقصد پوری طرح سمجھ سکے۔
معلم و تربی
آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا ذکر کرتے ہوئے قرآن میں ارشاد ہوا ہے کہ:
بلاشبہ اللہ تعالی نے مسلمانوں پر احسان فرمایا ہے کہ خود انہیں میں سے ایک رسول خود مبعوث کیا ہے جو اسکی ہدایت پڑھ کر سناتا ہے، ان کا تزکیہ کرتا ہے اور انہیں کتاب و حکمت کی تعلیم دیتا ہے۔
اللہ تعالی نے اپنے رسول کو صرف قرآن کی آیات سنانے کے لئے نہیں بھیجا تھا بلکہ اس کے ساتھ بعثت کے تین مقاصد تھے۔
(۱) آپ صلی اللہ علیہ وسلم لوگوں کو کتاب کی تعلیم دیں۔
(۲) اس کتاب کے منشا کے کتاب کام کرنے کی حکمت سلجھائیں۔
(۳) افراد کا انفرادی طور پر اور ان کی اجتماعی حقیقت کا بھی تزکیہ کریں۔ یعنی اپنی ترکیب سے ان کے اجتماعی اور انفرادی خرابیوں کو دور کریں اور ان کے اندر اچھے اور صاف اور بہتر اجتماعی نظام کی نشونما دیں۔
پیشوا، نمونہ تقلید
اللہ نے پیغمبروں کو ہادی رہنما اما و پیشوا بنایا ہے۔ یعنی نبوت اور وحی سے سرفراز ہونے کے بعد ان کی ذات مجسمہ میں ہدایت اور رہنمائی امامت اور پیشوائی کے لئے خاص ہوجاتی ہے وہ سب امت میں مبعوث ہوجاتے ہیں۔ اس کے سامنے ہدایت و رہنمائی کے دو چراغ ایک کتاب اللہ اور دوسری سنت رسول ان کی روشنی مل کر ایک ہوتی ہے۔ سورة ال عمران میں بھی فرمایا گیا ہے کہ:
اے نبی صلی اللہ علیہ وسلم! کہہ اگر تم اللہ سے محبت کرتے ہو تو میری پیروی کرو اللہ تم سے محبت کرے گا اور تمہارے گناہوں کو بخش دے گااور اللہ غفورالرحیم ہے۔ کہو اطاعت کرو اور رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی پھر اگر وہ منہ موڑتے ہیں تو اللہ تعالی کافروں کو پسند نہیں کرتا۔
اسی طرح سورة الاحزاب میں فرمایا:
تمہارے لئے اللہ کے رسول میں بہترین نمونہ تقلید موجود ہے ہر اس شخص کے لئے جو اللہ اور یومِ آخرت کی امید رکھتا ہے۔ حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے خطبہ میں سے ایک حجتہ الوداع کے موقع پر فرمایا:
میں تمہارے پاس دو چیزیں چھوڑے جارہا ہوں ایک اللہ کی کتاب اور اپنی سنت۔
شارع قانون ساز
قرآن مجید میں حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا ذکر کرتے ہوئے اللہ تعالی فرماتا ہے:
وہ ان کو معروف کا حکم دیتا ہے اور منکر سے روکتا ہے اور ان کے لئے پاک چیزوں کو حلال کرتا ہے اور ان پر ناپاک چیزیں حرام کرتا ہے اور ان پر سے وہ بوجھ اور بندھن اتار دیتا ہے جو ان پر چڑھے ہوئے ہیں۔
اس آیت میں معلوم ہوتا ہے کہ اللہ تعالی نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو شریعی اختیارات عطا کئے ہیں۔ اللہ کی طرف سے امر اور نہی اور حلال اور حرام صرف وہی ہیں جو قرآن مجید میں بیان ہوتے ہےں۔ بلکہ جو کچھ حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے حلال اور حرام قرار دئیے ہےں اور جس چیز کا حکم دیا ہے جس سے منع فرمایا ہے وہ بھی اللہ تعالی کے دیئے ہوئے اختیارات ہےں۔ اس لئے وہ بھی قانونِ خداوندی فکا حصہ ہے۔ یہی بات سورةالحشر میں پوری صداقت کے ساتھ بیان ہوئی ہے:
جوکچھ رسول تمہیں دے اسے لے لو اور جس چےز سے منع کرے اس سے رک جاو اور اللہ سے ڈرو اور بلاشبہ اللہ سخت سزا دینے والا ہے۔
قاضی اور حکیم
قرآن مجید میں بے شمار جگہوں پر اس کی وضاحت کی گئی ہے کہ اللہ نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو قاضی اور حکیم فرمایا ہے:
اے نبی صلی اللہ علیہ وسلم! ہم نے تمہاری طرف حق کے ساتھ کتاب نازل کی ہے تاکہ لوگوں کے درمیان فیصلے کرو جیسا کہ اللہ تمہیں دکھائے۔
مومن کی صفات میں سے ایک صفت یہ ہے کہ جب رسول کے فیصلے کی طرف دعوت دی جاتی ہے تو وہ کہتے ہیں کہ ہم نے سنا اور مان لیا اور اسی طرح ایک اور جگہ ارشاد ہوا ہے کہ:
مومنین کی شان یہ ہے کہ جب اللہ کا رسول تمہیں کسی معاملے میں کوئی حکم دے تو اسے بشرو چشم تسلیم کرلیتے ہیں اور ان کے دل مےں فیصلے کے خلاف ذرا بھی تنگی نہیں ہوتی۔

Class XI, Islamiat, "جہاد"


جہاد کے لفظی معنی
عربی زبان میں جہد کے معنی کوشس اور مشق کے ہیں۔ اسی لفظ سے جہاد نکلا ہے۔
جہاد کے شرعی معنی
مذہبی اصطلاح میں جہاد دین کی سربلندی ، ملت کا دفاع اور نیکی کی اشاعت کے لئے کوشش اور اسلام کی راہ میں روکنے والوں کے خلاف مسلح جنگ کا نام ہے۔ جو شخص خدا کا کلمہ بلند کرنے کے لئے مال سے زبان سے یا قلم سے اور ہاتھ پاوں سے کوشش کرتا ہے۔ وہ بھی جہاد ہی ہے۔ مگر خاص طور پر جہاد کا لفظ اس جنگ کے لئے استعمال کیا گیا ہے جو تمام دنیاوی اعراض سے پاک ہوکرمحض خدا کی رضا کے لئے اسلام کے دشمنوں سے کیا جائے۔
جہاد کی اقسام
(۱) جہاد بالنفس
انسان کو اطاعت الہی سے روکنے والی پہلی چےز انسان کی اپنی خواہشات ہیں۔ جوہر وقت اس کے دل مےں موجزن رہتی ہیں۔ انسان کو ان کی سوکوبی کے لئے ہروقت چوکنا رہنا چاہئے۔ لہذا خواہشاتِ نفس کے خلاف جہاد کو نبی نے جہادِ اکبر کا نام دیا ہے۔ اور یہ جہاد کا وہ مرحلہ ہے جسے طے کرکئے بغیر انسان جہاد کے کسی اور میدان میں کامیابی حاصل نہیں کرسکتا۔
(۲) شیطان کے خلاف جہاد
اپنے نفس پر قابو پانے کے بعد ان شیطانوں سے نمٹنا ضروری ہے جو اللہ کے بندوں کو مختلف حیلوں اور بہانوں سے بہلا کر اپنی اطاعت اور بندگی پر مجبور کرتے ہیں۔ قرآن حکیم اس قسم کی ہر قوت کو طاغوت کا نام دیتا ہے۔ ارشادِ باری تعالی ہے کہ:
جو لوگ ایمان والے ہیں اللہ کی راہ میں اور جو کافر ہیں سو لڑتے ہیں۔ شیطان کی راہ میں۔
(۳) جہاد بالمال
جہاد بالمال سے کیا مراد ہے کہ جوشخص استطاعت رکھتا ہو اور اس کی مالی حالت بہتر ہو تو وہ مال کے ذریعے تبلیغِ دین اور دشمنوں کے خلاف ملک و ملت کی حفاظت کے لئے مال صرف کرکے جہاد میں حصہ دار بن سکتا ہی اور اجر حاص کرسکتا ہے۔
اے ایمان والوں کہو تو میں تمہیں ایسی تجارت بتادوں جو تم کو درد ناک عذاب سے نجات دلاسکے۔ اللہ اور اس کے رسول پر ایمان لاو اور اپنی جان و مال سے اللہ کی راہ مےں جہاد کرو یہ تمہارے لئے بہتر ہے۔ اگر تم جانتے ہو۔
(۴) جہاد بالعلم
اس سے مراد وہ جہاد اور ہردرجہ کوشش ہے جو باطل عقیدوں اور غیر الہی قانون اور ظلم و جبر کے مقابلے پر کلمہ حق کہہ کر کیا جائے اور عملی دلیلوں کے ذریعے انسانوں کی فلاح و بہبود کے لئے بلاخوف و خطر کی جائے۔ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
سب سے بڑا جہاد حق بات ظلم اور سرکش حکمران کے سامنے کلمہ حق کہنا ہے۔
(۵) جہاد بالسیف
اس سے مراد وہ مسلح جدوجہد ہے جو مسلمانوں کے ملک کے خلاف دشمنِ اسلام کے حملے کے وقت ان کی حفاظت جان و مال اور تحفظِ ناموس کے لئے ہتھیاروں سے کی جائے۔ جب مسلمانوں کا حکم اسلام کے دشمنوں کے خلاف مقابلے کے لئے بلانے یا اعلان کرلے تو مسلمانوں پر فرض ہوجاتا ہے کہ وہ اس میں شریک ہو اور دشمن کا مقابلہ مسلح ہوکر کریں۔ اسکی اتنی اہم فرضیت ہی کہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
اگر ممکن ہوتا تو مےں دشمنوں کے مقابلے پر جنگ کرتے ہوئے شہید ہوتا اور پھر چلتا کہ دوبارہ زندہ کیا جاوں اور راہِ خدا میں دوبارہ شہید کیا جاوں۔
اس جہاد میں شریک ہوکر راہِ خدا میں جان دینے والوں کے لئے قرآن میں ارشاد ہے:
ان لوگوں کو جو راہِ خدا میں قتل کئے جائیں مردہ نہ کہو بلکہ وہ زندہ ہیں لیکن تمہیں اس کا شعور نہیں۔
جہاد کی فضیلت
اسلام مےں جہاد کو بڑی فضیلت حاصل ہے۔ قرآن و حدیث میں اس کی فضیلت کا بہت ذکر ملتا ہے مثلاً:
دائمی اور ابدی زندگی
اللہ کی راہ میں جان دینے والوں کو دائمی اور ابدی زندگی حاصل ہوتی ہے۔ اور اسے مردہ کہنے کی اجازت نہیں ہے۔ ارشادِ باری تعالی ہے:
اور اللہ کی راہ میں جو شہید ہوں ان کو مردہ نہ کہو بلکہ وہ زندہ ہےں لیکن تمہیں اس بات کا شعورنہیں۔
ایک اور جگہ فرمایا:
اور جو لوگ اللہ کی راہ میں قتل ہوتے ہیں ان کو مردہ نہ کہو وہ تو زندہ ہیں۔ اپنے رب کے ہاں رزق دیئے جاتے ہیں۔
جہاد کرنے والے ایمان میں صادق ہیں
اللہ کی راہ میں اپنے جان و مال سے جہاد کرنے والوں کے بارے میں ارشاد باری تعالی ہے:
مومن تووہ ہیں جو اللہ اور اسکے رسول پر ایمان لائے اور اللہ کی راہ میں جاہد کیا اپنے اموال اور اپنی جانوں سے یہی وہ لوگ ہیں جو سچے ہیں۔
جنت کا وعدہ
اللہ کی راہ میں جہاد کرنے والے سے اللہ نے جنت کا وعدہ کیا ہے۔ ارشادِ باری تعالی ہے کہ:
بے شک اللہ مومنوں سے ان کی جانیں اور مال کے عوض خرید لئے ہیں وہ اللہ کی راہ میں لڑتے ہیں وہ دشمن کو قتل کرتے ہیں اور خود قتل ہوجاتے ہیں یہ اللہ کے ذمے تورات، انجیل اور قرآن میں برحق وعدہ ہے اور اللہ سے بڑھ کر اپنے اس عہد کو پورا کرنے والا اور کون ہوسکتا ہے۔ پس تم اپنے اس سودے پر خوش ہوجاو تم نے جو اللہ سے کیا ہے۔ یہی عظیم کامیابی ہے۔
اللہ کے ہاں عظیم ترین درجہ
جہاد فی سبیل اللہ کرنے والوں کا اللہ کے ہاں عظیم ترین درجہ ہے۔ ارشادِ باری تعالی ہے:
اللہ کے ہاں تو انہیں لوگوں کا درجہ بڑا ہے جو ایمان لائے اور جنہوں نے اس کی راہ میں گھر بار چھوڑے اور جان و مال سے جہاد کیا۔ وہی لوگ کامیاب ہیں۔
اللہ ان سے محبت کرتا ہے
جو لوگ اللہ کی راہ میں جہاد کرتے ہیں۔ اللہ ان سے محبت کرتا ہے۔ قرآن مےںارشاد ہے کہ:
اللہ کو وہ لوگ پسند ہیں جو اس کی راہ میں اس طرح صف بینہ ہو کر لڑتے ہیں تویا کہ وہ ایک سیسہ پلائی ہوئی دیوار ہیں۔
ضرورت و اہمیت
قیامِ امن کے لئے جہاد ضروری ہے
دنیا میں امن کے قیام کے لئے جہاد ضروری ہے۔ اللہ تعالی کا ارشاد ہے کہ:
اور اگر اللہ کا بعض (لوگوں) کو بعض کے ذریعے ہٹادینا ہو تو زمین مےں بگاڑ ہوجاتا لیکن اللہ جہانوں پر فعل کرنے والا ہے۔
جہاد فرض کفایہ ہے
اگر ضرورت پڑے تو ملت کے لئے جہاد کرنا فرض کفایہ ہے۔ یعنی اگر ان میں سے ضرورت کے مطابق کچھ لوگ جہاد نہ کریں گے تو سب گہنگاروں میں شامل ہوجائےں گے۔ قرآن میں ارشاد ہے:
تم پر جہاد فرض کیا گیا ہے اگر چہ وہ تمہیں ناپسند ہے اور ممکن ہے کہ تم ایک چےز کو ناپسند کرو اور تمہارے لئے بہتر ہو۔
اسی طرح ایک اور جگہ ارشاد ہوتا ہے:
اور اس کی راہ میں جہاد کرو جیسے جہاد کرنے کا حق ہے۔
دشمن اہلِ اسلام کو ظلم کا نشانہ بنائے
مظلوم مسلمان کی مدد کے لئے جہاد کی نہ صرف اجازت ہے بلکہ اس کی ترغیب دی گئی ہے۔ ارشادِ باری تعالی ہے کہ:
اور تمہیں کیا ہوگیا ہے کہ تم اللہ کی راہ میں ان بے بس مردوں، عورتوں اور بچوں کی خاطر نہےں لڑتے جو کمزور کرکے دیا کئے گئے ہیں اور فریاد کررہے ہیں کہ خدایا ہم کو اس بستی سے نکال دے جس کے باشندے ظالم ہیں اور اپنی طرف سے ہمارا کوئی حامی و مددگار پیدا کردے۔
دشمن فتنہ و فساد پھیلائے
اگر دشمن فتنہ و فساد پھیلائے تو فتنے کو دور کرنے کے لئے جنگ کا حکم ہے۔
تم ان سے لڑتے رہو تاکہ فتنہ باقی نہ رہے اور دین اللہ کا ہوجائے۔